لاہور میں داتا دربار پر ہونے والے خودکش دھماکے کی ذمہ داری ٹی ٹی پی نے قبول کر لی

پاکستان کے مشہور ترین صوفی بزرگ کے دربار کے باہر ایک خودکش بم دھماکے میں کم از کم 10 افراد جاں بحق اور 24 زخمی ہو گئے۔ حملے کی ذمہ داری تحریکِ طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کے ایک دھڑے نے قبول کر لی ہے۔خودکش بم دھماکاخواتین کے لیے مخصوص داخلی دروازے کے قریب ہوا۔ خودکش بم دھماکا رمضان کے مقدس مہینےکے آغازمیں ہوا ہے۔جب سیکیورٹی فورسز نے علاقے کو گھیرے میں لیا تو تباہ ہونے والی گاڑی کا ڈھانچہ مزار کے قریب ایک فٹ پاتھ کے قریب بکھرا ہوا تھا۔دھماکے میں زخمی ہونے والوں کوہسپتال پہنچایا گیا۔ بھی ٹی ٹی پی نے دھماکے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

لاہور میں داتا دربار پر حملہ میں 10 افراد شہید ہو گئے ہیں۔ اور بہت سے افراد زخمی ہے۔ لاہور میں داتا دربار پر حملہ کا واقعہ بلکہ ماہ رمصان کے شروع میں کیا گیا۔ حکومت وقت نے بھی شدید الفاط میں داتا دربار پر حملہ کی مذمت کی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں